الأربعاء، 04 شوال 1438| 2017/06/28
Saat: (M.M.T)
Menu
القائمة الرئيسية
القائمة الرئيسية

برطانیہ میں حزب التحریر کے وفد نےخلافت کے داعیوں کے اغوا اور ان پر تشدد کے خلاف احتجاج کے لیے پاکستانی سفارت خانے کا دورہ کیا

   جمعہ  8 اپریل 2016کو حزب التحریر برطانیہ کی پاکستان کمیٹی کے ایک وفد، جس میں آصف صلاح الدین، ماجد حسین، رضوان احمد اور حمزہ احمد شامل تھے، نے پاکستان میں حکومت پاکستان کی جانب سے جھوٹے الزامات کے تحت گرفتار اور اغوا کیے گئے حزب التحریر کے ممبران کے ناموں پر مشتمل  فہرست  ایک بیان کے ساتھ لندن میں پاکستانی سفارت خانے کے حوالے کی جس کا عنوان تھا:" حزب التحریر  کے خلاف ظلم و ستم ختم کرو، انصاف پسند لوگوں کو خلافت کے داعیوں کے حق میں اپنی آواز بلند کرنی چاہیے"، اس بیان کو  ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے میڈیا آفس نے جاری کیا تھا۔

Read more...

"پریونٹ"(باز رکھنا)کا قانون محض ایک زہریلی چھاپ ہی نہیں بلکہ یہ زہریلا منصوبہ ہے جسے چیلنج کرنے کی ضرورت ہے

دارالحکومت کے سابق پولیس کمانڈرڈال بابو نے حکومت کی  انتہاپسندی کو روکنے کی پالیسی 'پریونٹ' (باز رجھنے) کی مخالفت کی اور کہا کہ اس نے  ایک زہریلی شکل اختیار کرلی ہے، جسےبرطانیہ کے مسلمان شک کی نظر سے دیکھتے ہیں۔  ان کا یہ تبصرہ  سنڈے ٹیلی گراف  کے اس اعلان کے ایک دن بعد سامنے آیا تھا جس میں سیکریٹری داخلہ تھریسامے نےانتہا پسندی  کا مقابلہ کرنے والے قوانین کی مدت میں  اضافے  کا اعلان کیا تھا  اور   جس  کا حزب اختلاف  کے عدلیہ کے معاملات کے شیڈو وزیر صادق خان نے پُرجوش خیر مقدم کیا۔  یہ اس بات کی نشان دہی کرتا ہے کہ   "شدت پسندی " کا سب سے زیادہ مخالف ظاہر کرنے کے لئے اب سر کردہ پارٹیوں کے درمیان  گویا جیسے  ایک دوسرے سے سبقت لے جانے کی دوڑ شروع ہوگئی ہے۔

تاجی مصطفی  ٰنے،جو برطانیہ میں حزب التحریر کے میڈیا  کے نمائندے ہیں ،نے اس خبر پرتبصرہ کرتے ہوئے  کہا کہ"یہ 'پریونٹ' کا قانون یقیناً ایک زہریلا نشان  ہے۔ صرف اس وجہ سے نہیں کہ اس کو غلط طور پر نافذ  کیا گیا یا اس کے حوالے سے  غلط فہمی ہوئی ہے ،  بلکہ یہ اپنی بنیاد سے ہی ایک ناقص اور زہر آلود  منصوبہ ہے ، کیونکہ اس کی   بنیاد ایک باطل مفروضے پر رکھی گئی ہے اور وہ یہ کہ ایک انسان جتنا زیادہ اسلام پسند ہوگا ،اتنا ہی وہ اندرونی طور پر خطرےکا باعث ہو سکتا ہے"۔

"یہ قانون اس مفروضے پر نافذ کیا گیا کہ ایسے  لوگ جو اسلامی اقدار کے حامل ہوتے ہیں یا ریاست  کے نقطۂ نظر کے برعکس  سیاسی رائے رکھتے ہیں، یہی لوگ مشکوک تصور کئے جائیں گے ،چنانچہ ریاست کو چینل پروگراموں کے ذریعے دوبارہ پروگرامنگ کی ضرورت ہے"۔

"اس قانون  میں جان بوجھ کر خارجہ پالیسی کو کلی طور پر نظر انداز کیا گیا ، جب کہ  برطا نیہ کے اندر تشدد کی کاروائیوں کا  خارجہ پالیسی کے ساتھ تعلق  ثابت شدہ ہے"۔

"یہ وہ  پالیسی ہے جس میں  سیاسی اور مذہبی  عقائد  سے نبٹنے کے لئے سیکورٹی  وجوہات  کو دلیل کے طور پر استعمال کیا گیا ہے۔  یہ اُس وقت  ہی واضح ہوگیا تھا   جب دسمبر 2014 میں  پولیس چیف سر پیٹر فاہی نے کہا تھا کہ  مجھے خدشہ ہے کہ  پولیس "افکار کی نگرانی کرنے والی پولیس" میں تبدیل ہوجائے گی"۔

"یہ وہ پالیسی ہے جو اکثر جابر ریاستوں میں نظر آتی ہے۔ فاہی نے اپنے  اسی تبصرے میں اشارہ کیا تھا کہ کیونکہ  شدت پسندی کی باریکی سے تعریف نہیں کی گئی تھی  لہٰذا پولیس اپنے طور پروضع کردہ مخصوص تعریفوں کی بنیاد پر کام کرتی رہی۔ اس نے مزید  اپنے خدشات کا اظہار کرتےہوئے کہا کہ   یہی "پولیس اسٹیٹ" کی طرف بڑھنے کاراستہ ہے"۔

"دہشت گردی کی روک تھام کا موجودہ قانون اور سیکورٹی ایکٹ نے فکری پولیسنگ کا  کام کرنے کی ذمہ داری  استادوں ، نرسری ورکرز، صحت کے شعبےمیں کام کرنے والوں  اور یونیورسٹیوں  پر ڈالی ہے۔   یہ پالیسی 1950 کی میک کارتھیسیزم  کی یاد دلاتی ہے،  بلکہ مشرقی جرمنی کے سٹاسی قوانین کی یاد دلاتی ہے"۔

"حزب التحریر کو اس بات کا احساس  ہے کہ   مسلم کمیونٹی اور بالعموم پورے معاشرے کے سامنے ان   ناپاک ، بے وقعت اور ناقص  ہتھکنڈوں  کو مسلسل بے نقاب کرنا واجب ہے ، اور ہم یہ واضح کردینا چاہتے ہیں کہ ہم ایسا ہی کرتے رہیں گے   جیسا کہ ہم  ایک دہائی سے زیادہ عرصے سے کرتے چلے آرہے ہیں"۔

برطانیہ میں حزب التحریر کا  میڈیا آفس

Read more...
Subscribe to this RSS feed

دیگر ویب سائٹس

مغرب

سائٹ سیکشنز

مسلم ممالک

مسلم ممالک