الثلاثاء، 11 ذو القعدة 1442| 2021/06/22
Saat: (M.M.T)
Menu
القائمة الرئيسية
القائمة الرئيسية

مسجد میں خون کی ہولی اوباما کی پاکستان کے بارے نئی حکمت عملی کے عین مطابق ہے امریکہ پاکستان میں قتل عام پاکستان کے غدار حکمرانوں کی مدد سے کر رہا ہے

راولپنڈی کی ایک مسجد میں ہونے والے مسلمانوں کے بے دریغ قتل عام کی حزب التحریر شدید الفاظ میں مذمت کرتی ہے جس میں 17 بچوں سمیت37 مسلمان جاں بحق ہوئے ۔ عوام جانتے ہیںکہ اس قسم کے دھماکے جن میں صالح مسلمانوں کا قتل عام کیا جاتا ہے درحقیقت ان کے پیچھے مسلمان نہیں بلکہ امریکی ایجنسیاں اور بلیک واٹر اور ڈائن کورپ کے کرائے کے قاتل ملوث ہوتے ہیں۔ اس کی ایک مثال اسلامی یونیورسٹی اور پشاور میں مسجد کے باہر مینابازار میں بم دھماکے کی شکل میں ہم پہلے ہی دیکھ چکے ہیں۔ ان دھماکوں کا مقصد پاکستان میں امریکی جنگ کے لئے رائے عامہ برقرار رکھنا اور مزید علاقوں میں پاک فوج کے آپریشن کرنے کے لئے حالات سازگار بنانا ہوتا ہے۔ چند دن قبل اوباما نے اپنی تقریر میں بھی اس امر کا انکشاف کیا تھا کہ پاکستانی عوام کی رائے تبدیل کرنے میں پاکستان میں ہونے والے بم دھماکوں نے کلیدی کردار ادا کیا ہے۔ اس نے کہا:

 

 ''ماضی میں پاکستان میں ایسے لوگ رہے ہیں جو یہ کہتے تھے کہ انتہاپسندوں کے خلاف جدوجہد ان کی جنگ نہیں... لیکن پچھلے چند سالوں میں جب معصوم لوگ کراچی سے اسلام آباد تک قتل ہوئے... ﴿پاکستان کی﴾ رائے عامہ تبدیل ہو گئی ‘‘۔

 

 افسوس تو یہ کہ پاکستان کے غدار حکمران امریکہ کو قتل عام میں مکمل تحفظ فراہم کر رہے ہیں۔ سہالہ میں پائے جانے والے امریکی فوجی ڈپو اور اسلام آباد میں کھلے عام دندناتے بلیک واٹر کے قاتل اہلکاروں کی حکومتی حفاظت و سرپرستی اس امر کی واضح دلیل ہیں کہ امریکہ کو اس قتل عام میں پاکستانی حکومت کی مکمل حمایت حاصل ہے۔ امریکہ پہلے ہی پاک فوج میں موجود مخلص اور صالح فوجی افسران سے خطرہ کا اعلان کر چکا ہے۔ آج جس مسجد کو نشانہ بنایا گیا وہاں اعلیٰ فوجی اہلکار نماز جمعہ ادا کر رہے تھے ۔ ایسے میںیہ بعید از قیاس نہیں کہ امریکہ کا ٹارگٹ اسلامی ذہن رکھنے والے چند مخصوص اعلیٰ فوجی افسران ہوں۔ حزب التحریر عوام اور فوج میں موجود مخلص عناصر سے مطالبہ کرتی ہے کہ وہ اس انتشار کو روکنے کے لئے حزب التحریر کے ساتھ مل کر امریکہ کو خطے سے نکالنے اور خلافت قائم کرنے کے لئے متحرک ہو جائیں۔

Read more...

امریکی راج اور وزیرستان آپریشن کے خلاف مہم چلانے پر حزب التحریر کے تیس سے زائد کارکنوں کو گرفتار کر لیا گیا حکومت گرفتاریوں کے ذریعے حزب التحریر کو کلمہ حق بلند کرنے سے نہیں روک سکتی

حزب التحریر اسلام اور مسلمانوں کے مفادات کی خاطر گزشتہ پچاس سال سے قربانیاں دیتی آئی ہے اور حالیہ گرفتاریاں اس کی شاندار تاریخ کی ایک چھوٹی سے مثال ہے۔ حزب التحریر وزیرستان ایجنسی کے نہتے عوام کے خلاف فوجی آپریشن اور پاک فوج کو امریکی جنگ میں جھونکنے کے خلاف مہم چلائے ہوئے ہے۔ اس سے خوفزدہ ہو کر حکومت نے حزب التحریر کے اراکین کو گرفتار کرنے کا سلسلہ شروع کر دیا ہے۔ اس ضمن میں کل لاہور سے نہ صرف حزب کے ممبر کو گرفتار کیا گیا بلکہ اسے تشدد کا نشانہ بھی بنایا گیا۔ آج حزب کے ایک پر امن سیمینار پر، جسے ایک گھر میں منعقد کیا گیا تھا، حکومت نے چھاپہ مار کے حزب التحریر کے ڈیپٹٰی ترجمان عمران یوسفزئی سمیت تیس سے زائد حزب التحریر کے ممبران اور سپورٹرز کو گرفتار کر لیا۔ یہ وہی پولیس ہے جو بلیک واٹر اور ڈائن کورپ کے دہشت گردوں کو اسلام آباد کی گلیوں میں دہشت پھیلانے سے تو نہیں روک سکتی لیکن امریکی راج کے خلاف منعقدہ سیمینار کو سبوتاژ کرنے کے لئے فوری متحرک ہو جاتی ہے۔ کیا وجہ ہے کہ وزیرستان آپریشن کے لئے رائے عامہ بنانے کے لئے شہروں میں پے درپے دھماکے کئے جاتے ہیں اور ہماری ایجنسیاں اور سیکورٹی فورسز منہ دیکھتی رہ جاتی ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ ان حکمرانوں نے ان سیکورٹی فورسز کو پر امن مسلمانوں اور خلافت کے داعیوں کو گرفتار کرنے کی ذمہ داری سونپ رکھی ہے اور ان کے پاس اصل دشمنوں کو گرفتار کرنے کی فرصت ہی نہیں۔ ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ حزب التحریر کے ممبران کو پکڑنے میں وقت ضائع کرنے کے بجائے بلیک واٹر اور ڈائن کورپ کے دہشت گردوں کو پکڑنے میں وقت صرف کرے ۔ نیز ہم حزب کے ممبران کی فی الفور رہائی کا بھی مطالبہ کرتے ہیں۔

یہ امر پوری دنیا کو معلوم ہے کہ حزب التحریر ایک غیر عسکری سیاسی جماعت ہے جو خلافت کے قیام کے لئے منہج نبوی ﷺ پر کاربند ہے جس میں عسکری جدوجہد کی کوئی گنجائش نہیں۔ اسی لئے حزب التحریر سیاسی اور فکری جدوجہد کے ذریعے معاشرے کو تیار کرنے اور اہل طاقت عناصر سے نصرت طلب کرنے کے طریقہ کار پر کاربند ہے۔ استعمار اور ان کے ایجنٹ جو آزادیٔ رائے کے نام پر پاکستان کے معاشرے میں فحاشی پھیلا رہے ہیں، حزب التحریر کے افکار کو سینسر کرنے اور اسے عوام تک پہنچنے سے روکنے کی ناکام کوششوں میں مصروف ہیں۔ اسی لئے استعمار کے حکم پر حزب التحریر پر تقریباً تمام مسلم ممالک میں پابندیاں لگائی جاتی ہیں اور اس کے ممبران کو گرفتار کیا جاتا ہے کہ کہیں خلافت کے قیام کے ذریعے حزب مسلمانوں کو دوبارہ وحدت نہ بخش دے۔ حکومت یاد رکھے کہ حزب التحریر خلافت راشدہ کے قیام تک اپنی جدوجہد جاری رکھے گی اور اسے گرفتاریوں اور تشدد سے نہیں روکا جاسکتا۔ ہم ان غدار حکمرانوں کو یہ بھی بتا دینا چاہتے ہیں کہ وہ اور ان کا آقا امریکہ ایڑی چوٹی کا زور لگا لے لیکن وہ خلافت راشدہ کے دوبارہ قیام کو نہیں روک سکتے اور ہمیں اس کی بشارت رسولِ مقبول ﷺنے اپنی زبان مبارک سے دی ہے۔

 

 ﴿﴿ثم تکون خلافۃ علیٰ منہاج النبویٰ﴾﴾

''اور خلافت پھر نبی ﷺ کے منہج پر قائم ہوگی‘‘۔

Read more...

وزیرستان آپریشن، جان کیری کی آمد اور گرفتاریوں کے خلاف ملک بھر میں حزب التحریر کے احتجاجی مظاہرے

حزب التحریر نے اسلام آباد، لاہور، کراچی اور پشاور میں احتجاجی مظاہرے منعقد کئے۔ مظاہرے وزیرستان آپریشن، امریکی سینیٹر جان کیری کی آمد اور حزب التحریر کے ۰۳ سے زائد کارکنوں اور سپورٹرز کی گرفتاریوں کے خلاف کئے گئے تھے۔ مظاہرین نے کتبے اور بینر اٹھا رکھے تھے جس پر امریکی راج اور گرفتاریوں کے خلاف نعرے تحریر تھے۔ مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے حزب کے ممبران کی گرفتاری کی شدید الفاظ میں مذمت کی اور حکومت کو یہ باور کرایا کہ حزب اپنی غیر عسکری سیاسی جدوجہد جاری رکھے گی۔ مزید برآں انہوں نے بڑھتے ہوئے امریکی اثر و رسوخ اور امریکی راج کے لئے حکمرانوں کی طرف سے فراہم کی جانے والی مکمل مدد و معاونت کی بھی مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ بلیک واٹر اور ڈائن کورپ کے دہشت گرد اسلام آباد کی گلیوں میں دندناتے پھرتے ہیں جبکہ اسلام اور خلافت کی بات کرنے والوں کو گھروں سے اٹھالیا جا تا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حالیہ گرفتاریاں حکومت کی بوکھلاہٹ ثابت کرتی ہیں اور حزب التحریر وزیرستان میں بے گناہ شہریوں اور فوج کے جوانوں کو لڑانے کی سازش کے خلاف آواز بلند کرتی رہے گی۔ مقررین نے جان کیری کی آمد کی بھی مذمت کی جو پاکستان کے معاملات کو مائیکرو مینج کرنے کے لئے پاکستان آرہا ہے۔ حزب التحریر ایک غیر عسکری سیاسی جماعت ہے جس کا عسکریت پسندی سے کوئی تعلق نہیں لیکن استعمار کے حکم پر اس پر تقریباً ہر مسلم ملک میں پابندی لگائی جاتی ہے۔ اس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ حزب التحریر نہ صرف موجودہ سرمایہ درانہ نظام کا متبادل پیش کر رہی ہے بلکہ اس کے پاس خلافت کی شکل میں امت کی وحدت کا عملی پروگرام بھی ہے۔ وقت آگیا ہے کہ اہل نصرت حزب التحریر کی پکار پر لبیک کہیں اور حزب کو نصرت فراہم کرتے ہوئے خلافت کا قیام عمل میں لائیں۔ اسی میں دونوں جہان کی کامیابی ہے!

Read more...

پاکستان میں خانہ جنگی جاری رکھنے کے لئے امریکہ ، بلیک واٹر اور یہ غدار حکمران جگہ جگہ بم دھماکے کروا رہے ہیں

اسلامی یونیورسٹی کے بم دھماکے کے بعد کسی شک کی گنجائش نہیں رہی کہ ان دھماکوں کے پیچھے امریکہ، بلیک واٹر اور یہ غدار حکمران ہیں جن کا مقصد پاکستان میں سوات اور وزیرستان آپریشن جیسی خانہ جنگی کو جاری رکھنا ہے۔ اسی خانہ جنگی کو شروع کرنے سے چند روز قبل شہری علاقوں میں بموں کا سلسلہ شروع کیا گیا جس کو بنیاد بنا کر یہ ظاہر کیا گیا کہ حکومت کے لئے آپریشن کرنا ناگزیر ہو چکا ہے۔ جبکہ سب جانتے ہیں کہ وزیرستان آپریشن کا حکم پہلے ہی امریکہ دے چکا تھا اور بم دھماکے محض تصویر میں رنگ بھرنے کے لئے کروائے گئے۔ امریکہ نے یونیورسٹی میں دھماکے کے ذریعے ایک تیر سے دو شکار کرنے کی کوشش کی۔ یعنی امریکی جنگ کے لئے رائے عامہ بھی ہموار ہو جائے اور وہ بھی اسلام پسندوں کا خون بہا کر!! عوام جانتے ہیں کہ یہی حربہ امریکہ نے عراق میں بھی استعمال کیا تھا جب اس نے مساجد اور بازروں میں نام نہاد خود کش بم دھماکے کروائے جن کا مقصد امریکہ کے خلاف برسرِپیکار مجاہدین کو بدنام کرنا اور عوام میں کنفیوژن پھیلانا تھا۔ پاکستان کے عوام جان چکے ہیں کہ امریکہ نے ایک سازش کے ذریعے افغانستان کی جنگ پاکستان تک پھیلا دی ہے تاکہ پاکستان میں جہاد کے متمنی مسلمانوں کو افغانستان جانے سے روکا جائے اور انہیں پاکستان کی فوج کے ساتھ لڑا کر کمزور کر دیا جائے۔ یوں دونوں طرف مرنے والے مسلمان ہوں اور امریکہ بغیر اپنے فوجی ضائع کئے کامیابی حاصل کر لے۔ افسوس کہ جہاد فی سبیل اللہ کے ماٹو پر تیار کئے گئے پاکستان کے جرّی جوانوں کو حکومت امریکی جنگ میں جھونک رہی ہے۔ سب جانتے ہیںکہ پاکستان میں انتشار اور خانہ جنگی کی یہ فضائ امریکی FBI ، بلیک واٹر اور میرینز کے خطے میں آنے سے قبل موجود نہ تھی۔ بلیک واٹر کے سکینڈل کے بعد سہالہ میں ﴿پولیس ٹریننگ سنٹرمیں﴾ حکومت کی مدد سے قائم کردہ امریکی فوجی ڈپو اور اس میں ذخیرہ کیا گیا دھماکہ خیز مواد بھی منظرعام پر آچکا ہے۔ جس سے یہ ثابت ہوگیا ہے کہ امریکہ اپنی کاروائیاں حکومت کی مدد سے کر رہا ہے۔ چنانچہ امن و آشتی کے لئے یہ ضروری ہے کہ امریکہ کو دیس نکالا دیا جائے۔ ہم امت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ امریکہ کو نکال باہر کرنے اور ان غدار حکمرانوں کو جڑ سے اکھاڑنے کے لئے حزب التحریر کے شانہ بشانہ سڑکوں پر نکلیں۔ بے شک آپ ﷺ نے حق فرمایا ہے کہ حکمرانوں کی غداری ہی سب سے بڑی غداری ہے۔ ارشاد نبی ﷺ ہے:

 

''قیامت کے دن ہر غدار کے کولہے سے ایک جھنڈا باندھا جائے گا جسے اس کی غداری کے درجے کے مطابق بلند کیا جائے گا۔ اور جان لو کہ کوئی غداری اس سے بڑھ کر نہیں کہ ایک حکمران اپنی عوام سے غداری کرے‘‘۔ ﴿مسلم﴾

 

 

Read more...

حکومت حزب التحریر کو دہشت گردی سے منسلک کرنے میں ایک بار پھر ناکام ، عدالت نے ۲۸ افراد کو ضمانت پر رہا کر دیا

ہمیشہ کی طرح اس مرتبہ بھی حکومت حزب التحریر کے خلاف دہشت گردی کے الزامات ثابت کرنے میں ناکام رہی۔ حزب التحریر کے وکیل نے عدالت میں حکومتی وکیل کو چیلنج کیا کہ قبضے میں لئے گئے حزب کے لٹریچر میں سے ایک بھی لائن ایسی پیش کر دیں جو دہشت گردی یا فرقہ وارانہ منافرت پھیلاتی ہو۔ اس پر حکومتی وکیل نے ایک گھنٹے کی مہلت مانگی لیکن اس کے باوجود بھی وہ عدالت میں کوئی خاطر خواہ ثبوت پیش نہ کر سکے۔ چنانچہ انسداد دہشت گردی کی عدالت نے 28 ممبران اور سپورٹرز کو ضمانت پر رہا کر دیا اور تنبیہ کی کہ اس طرح کے کمزور مقدمے ان کے سامنے پیش نہ کئے جائیں۔ حزب التحریر کی بڑھتی ہوئی مقبولیت سے گھبرا کر مشرف کی آمرانہ حکومت نے 2003 میں حزب التحریر پر پابندی لگائی تھی جسے پی پی پی کی جمہوری حکومت نے بدستور جاری رکھا۔ جبکہ اس سے قبل کراچی کی دہشت گردی کی عدالت یہ فیصلہ سنا چکی ہے کہ حزب التحریر پر لگی پابندی ناقص (defective) ہے کیونکہ پابندی لگاتے وقت حکومت کی طرف سے کوئی وجوہات پیش نہیں کی گئیں۔ نیز حزب التحریر کی پابندی کو چیلنج کرنے والی رِٹ آج بھی لاہور ہائی کورٹ راولپنڈی بینچ میں سماعت کی منتظر ہے جس کو دائر کئے لگ بھگ ساڑھے تین سال کا عرصہ بیت چکا ہے۔ حزب جانتی ہے کہ آمریت ہو یا جمہوریت دونوں نظاموں میں استعمار کے مفادات کا تحفظ کیا جاتا ہے اور اسی لئے حزب التحریر پر پابندی لگائی جاتی ہے۔ ہم ایک بار پھر اعلان کرتے ہیںکہ حزب التحریر پر لگی پابندی حزب کو خلافت کے لئے اپنی غیر عسکری سیاسی جدوجہد سے نہیں روک سکتی۔ یہی وجہ ہے کہ تمام پابندیوں کے باوجود حزب دنیا کی سب سے بڑی سیاسی اسلامی جماعت بن کر ابھری ہے جو چالیس سے زائد ممالک میں بڑی مستعدی اور جذبے کے ساتھ کام کر رہی ہے۔ ہم امت کو یہ خوش خبری بھی سنانا چاہتے ہیں کہ حزب اپنی اس جدوجہد کے آخری مراحل میں داخل ہو چکی ہے اور انشائ اللہ وہ جلد امت کو خلافت کے انعقاد کی نوید سنائے گی۔ نصر من اللہ و فتح قریب!!

Read more...

خون کی پیاسی دیوی، ہلری کلنٹن، کی پیاس بجھانے کے لئے پشاور میں خون کی ہولی کھیلی گئی

آج امریکی سیکرٹی خارجہ ، ہلری کلٹن کی آمد پر ایک بار پھر پاکستان کے نہتے عوام کا لہو بہا کر اس کا ریڈ کارپٹ استقبال کیا گیا۔ یہ پہلی بار نہیں ہوا جب امریکی اعلیٰ اہلکاروں کے دل کو بہلانے کے لئے ان کی آمد پر مسلمانوں کا خون بہا گیا ہو۔ خون کی پیاسی امریکی دیوی ہلری کلنٹن کی پیاس بجھانے کے لئے امریکی ایجنسیوں اور کرائے کے قاتلوں نے پشاور کے گنجان بازار میں مسلمانوں کی خون کی ندیاں بہا دیں۔ اطلاعات کے مطابق اب تک 60 سے زائد مسلمان جن میں اکثریت عورتوں اور بچوں کی ہے اپنی زندگی سے ہاتھ دھو چکے ہیں جبکہ سو سے زائد زخمی ہیں۔ امت یہ امریکی کھیل کو سمجھ چکی ہے کہ شہری علاقوں میں بم دھماکے کروا کر قبائلی علاقوں میں خانہ جنگی جاری رکھی جائے۔ جہاں مرنے والا بھی مسلمان ہو اور مارنے والا بھی مسلمان۔ امریکہ اسی قسم کا قتل عام پہلے بھی عراق میں کروا چکا ہے۔ سہالہ میں بارود کا امریکی گودام بھی منظر عام پر آچکا ہے جہاں پولیس ٹریننگ سنٹر کے کمانڈنٹ تک کو جانے کی اجازت نہیں۔ آج کے اخبارات میں چھپنے والی یہ خبر بھی قابل ذکر ہے کہ اسلام آباد جیسے شہر میں امریکی اہل کار افغان باشندوں کا روپ دھار کر اسلحے اور دیگر جدید آلات سے لیس ہو کر کھلے عام دندناتے پھر رہے تھے۔ پولیس جب انہیں گرفتار کرنے کی کوشش کی تو امریکی سفارتخانہ سے انہیں چھڑانے ان کے لئے ان کے حلیف فورا آن پہنچے اور حکومت خاموش تماشائی بنی بیٹھی رہی۔ اس قسم کے واقعے پہلے بھی اسلام آباد اور پشاور میں رو نما ہو چکے ہیں جبکہ حکومت ان کرائے کے قاتلوں کے خلاف کسی بھی قسم کا قدم اٹھانے کے لئے تیار نہیں۔ اس سے ثابت ہوا کہ موجودہ دہشت گردی کی وارداتوں میں نہ صرف امریکی خفیہ ایجنسیاں اور بلیک واٹر اور ڈائن کارپ کے کرائے کے قاتل ملوث ہیں بلکہ حکومت بھی اپنا گنائونہ اور گھٹیا کردار ادا کر رہی ہے۔ اس سے بڑھ کر اور کیا غداری ہو سکتی ہے کہ حکومت حزب التحریر اور دیگر مخلص مسلمانوں کو کلمہ حق بلند کرنے سے روکنے کے لئے تو انہیں پابند سلاسل کرتی ہے جبکہ امریکی دہشت گردوں کو مسلمانوں کا قتل عام کرنے کے لئے کھلا چھوڑ دیتی ہے ۔ پاکستان کے حالیہ انتشار کا واحد حل امریکہ کا خطے سے انخلائ ہے۔ ہم امت سے مطالبہ کرتے ہیںکہ وہ بھی اپنی چپ کا روزہ توڑیں اور خاموش تماشائی بننے کے بجائے میدان عمل میں آئیں۔ ورنہ یہ NRO زدہ غدار حکمران امریکہ کے ساتھ مل کر اس خانہ جنگی کو کوئٹہ اور جنوبی پنجاب سمیت پورے ملک تک پھیلا دیں گے۔ ہم پاک فوج میں مخلص عناصر سے بھی مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ وقت ضائع کئے بغیر پاکستان کو امریکی راج سے چھٹکارا دلانے کے لئے متحرک ہو جائیں اور حزب التحریر کو نصرت دے کر خلافت راشدہ کا انعقاد کریں تاکہ امریکہ کو اس خطے سے مار بگھایا جائے جو اس فتنے کی اصل جڑ ہے۔

Read more...

تحفظ کے نام پر ایٹمی ہتھیاروں پر امریکی اثرونفوز کو قبول کیا جارہا ہے

نیو یارکر میگزین کے اس انکشاف نے کہ امریکہ اور پاکستان کے درمیان پاکستان کے جوہری ہتھیاروں کے اضافی تحفظ کے لیے مزاکرات جاری ہیں ، ان خدشات کو دوبارہ تقویت فراہم کی ہے کہ موجودہ جمہوری حکمران بھی پاکستان میں امریکی اجارہ داری کو وسعت دینے کے لیے آمر پرویز مشرف سے بھی کئی ہاتھ آگے جاچکے ہیں۔ پاکستانی وزارت خارجہ اور امریکی سفیر کا اس معاملے پر تردیدی بیان باعث اطمینان نہیں ہوسکتا کیونکہ حالیہ دنوں میں پاکستان میں امریکی سیکیوریٹی اداروں کی موجودگی کے واضع شواہد ملنے کے باوجود امریکی سفارت خانہ اور حکومت پاکستان ان کی موجودگی سے انکار کرتے آئے ہیں۔ اس کے علاوہ اب یہ بات کہ سہالہ میں پولیس ٹرینگ سینٹر جو کہ کہوٹہ ریسرچ سینٹر سے صرف آٹھ کلومیٹر کے فاصلے پر ہے، 2003 سے امریکیوںکے زیر استعمال ہے اور ڈاکٹر عبدل قدیر خان کے اس انکشاف نے کہ پرویزمشرف نے ان سے ایٹمی اثاثوں کی فہرست بنوا کر امریکہ کے حوالے کر دی تھی ، ان تردیدوں کی صحت کو مزید کمزور کردیا ہے۔ پاکستان کی ابتر ہوتی امن و امان کی صورتحال ،بم دھماکے، ملک کے دو صوبوں میں جاری فوجی آپریشن خصوصاً اسلام آباد میں جی ایچ کیو پر حملہ اورسینیر آرمی آفیسرز پر تواتر کے ساتھ جاری قاتلانہ حملے ،اس ماحول کو پیدا کرنے کی کوشش ہے جس کے تحت پاکستان کے ایٹمی اثاثوں اور پالیسیوں پر امریکی اثر و نفوزکو قبول کرنے کے لیے جواز فراہم کیا جائے گا ۔ جس دن سے پاکستان اس نام نہاد دہشت گردی کے خلاف جنگ میں امریکہ کا اتحادی بنا ہے،پاکستان کی معاشی،سیاسی، دفاعی اور اندرونی سلامتی کے معاملات کمزور سے کمزور تر ہوتے جارہے ہیں۔ پاکستان کے ایٹمی ہتھیاروں کو خطرہ طالبان سے نہیں ہے جو کہ بقول حکومت پاکستان کے سوات اور جنوبی وزیرستان میں فوجی آپریشن کے بعد سے فرار ہورہے ہیں بلکہ خطرہ امریکی فوج اور ملک میں موجود امریکی نجی سیکیوریٹی کے اداروں سے ہے جو دارلحکومت سمیت پاکستان کے کسی بھی علاقے میں بغیر کسی روک ٹوک کے جاسکتے ہیں۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ عوام اور افواج ُپاکستان میں موجود مخلص عناصر حزب التحریر کے ساتھ متحرک ہوکر موجودہ ایجنٹ حکمرانوں سے نجات حاصل کرکے خلافت کا قیام عمل میں لائیں ۔ یہ خلافت ہی ہوگی جو نہ صرف خطے سے امریکی افواج کو نکال باہر کرے گی بلکہ ان ایٹمی ہتھیاروں کو بھی امت کے تحفظ کے لیے استعمال کرے گی۔

Read more...

خلافت ایٹمی ہتھیاروںکے بارے میں نہایت ہی جامع اور ذمہ دارانہ پالیسی رکھتی ہے

پاکستان کے ایٹمی ہتھیاروں کے بارے میں سیمور ہرش کے انکشافات نے حکمرانوں کی مسلمانوں اور اسلام سے غداری کو بے نقاب کر دیا ہے۔ آمر انہ اور جمہوری قیادتیں یکساں طور پر اپنی کرسی کی خاطر پاکستان کی خودمختاری کو گروی رکھنے کے بعد ایٹمی ہتھیاروں کو بھی امریکی اسپیشل اسکواڈ کے زیر کنٹرول لا کر بدترین سیکیورٹی رسک بن چکی ہے۔ اس مضمون سے یہ بھی واضح ہو گیا ہے کہ بھارت اور امریکہ کسی آمریت یا حقیقی جمہوری نظام سے نہیں،بلکہ صرف اور صرف خلافت کے دوبارہ قیام سے خوفزدہ ہیں اور اس ضمن میں حزب التحریر کی جدوجہد ان کے لئے سب سے بڑا خطرہ ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ حزب التحریر پر مسلم ممالک میں پابندی لگائی جاتی ہے جبکہ وہ ایک غیر عسکری سیاسی جماعت ہے۔

سیمور ہرش نے اس مضمون میں اپنا خبث باطن بھی آشکار کر دیا ہے جہاں اس نے حزب التحریر کا نام لیتے ہوئے اسے خطرے کے طور پر پیش کیا ہے۔ نیز خلافت کے بارے میں دہشت گرد ریاست ہونے کا جھوٹا تأثر بھی پیش کرنے کی کوشش کی ہے۔ جبکہ خلافت کی تیرہ سو سالہ تاریخ گواہ ہے کہ یہ صرف خلافت ہی تھی جس نے عیسائیوں اور یہودیوں سمیت دیگر مذاہب کے ماننے والوں کو نہ صرف اپنی آغوش میں جگہ دی بلکہ ان کے حقوق کا مکمل تحفظ کیا۔ اس کے برخلاف اسرائیل، بھارت، امریکہ اور فرانس جیسی جمہوری حکومتوں میں مسلمانوں کے ساتھ جو ناروا سلوک روا رکھا جاتا ہے وہ سب کے سامنے ہے۔ خلافت کی ایٹمی پالیسی اللہ سبحانہ و تعالیٰ کی جانب سے مقرر کردہ ﴿Divine﴾ احکامات پر مبنی ہے جسے کوئی خلیفہ تبدیل کرنے کا مجاز نہیں۔ اسی لئے یہ خلافت کی ایٹمی پالیسی مغرب کی پالیسی سے زیادہ جامع اور ذمہ دارانہ ہے۔ جبکہ مغرب کی پالیسی کی ایک بد ترین مثال ہم ہیرو شیما اور ناگا ساکی کے قتل عام میں دیکھ چکے ہیں۔ اسلام خلافت کیلئے ایٹمی ہتھیاروں کی تیاری لازم قرار دیتا ہے کیونکہ اسلام دشمن پر رعب اور ہیبت طاری کرنے والے ہر وسیلے کی تیاری کا حکم دیتا ہے۔ اسلام کی رو سے ایٹمی ہتھیار کا استعمال عمومی طور پر جائز نہیں لیکن اسے صرف استثنائی حالات میں استعمال کیا جاسکتا ہے کیونکہ ان ہتھیاروں سے فوجی تنصیبات کے ساتھ ساتھ بے گناہ عوام کا بھی قتل عام ہوتا ہے ۔ اس ضمن میں دو استثنا یہ ہیں، اولاً: اسلام کفار کو ترکی بہ ترکی ﴿Tit for Tat﴾جواب دینے کی اجازت دیتا ہے۔ چنانچہ خلافت دشمن کی جانب سے ایٹمی ہتھیاروںکے استعمال کی صورت میں جوابی ایٹمی ہتھیار استعمال کرنے کا حق محفوظ رکھتی ہے۔ ثانیاً: دشمن کے ایٹمی حملے کی تیاری کے واضح شواہد ملنے کی صورت میں پیشگی ایٹمی حملہ (Pre-emtive strikes) کرنے کی بھی شریعت اجازت دیتی ہے۔ نیز خلافت ایٹمی ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤ (Non-prolifiration) پر یقین رکھتی ہے کیونکہ خلافت کی موجودگی میں کسی اور اسلامی ریا ست کا وجود نہیں ہو سکتا اور خلافت ایٹمی ہتھیار کافر ملکوں کوکسی بھی طور مہیا نہیںکریگی۔ خلافت کا قیام بہت جلد ہونے والا ہے اور امریکہ اور دیگر کافر ممالک کی بوکھلاہٹ بہت واضح ہے۔ لیکن وہ یاد رکھیں کہ ان کی تمام چالیں اللہ کے حکم سے ناکام ہو کر رہیں گی اور رسول اللہ ﷺ کی بشارت کے مطابق خلافت ضرور قائم ہو کر رہے گی۔

Read more...

حزب التحریر ۰ا لاکھ ایکڑ زمین کارپوریٹ فارمنگ کے نام پر چند سرمایہ داروں کے حوالے کرنے کی پرزور مذمت کرتی ہے

حزب التحریر وفاقی وزیر برائے سرمایہ کاری وقار احمد خان کے اس بیان کی پرزور مذمت کرتی ہے جس کے تحت بیرونی سرمایہ کاری اور غیرملکی ٹیکنالوجی کی ملک میں آمد کے نام پر کارپوریٹ فارمنگ کو فروغ دینے کے لیے ۰۱ لاکھ ایکڑ زمین بیرونی سرمایہ کاروں کو بیچنے کااعلان کیاگیا ہے۔ ملک میں لاکھوں بے زمین ہاریوں کو زمین نہیں دی جاتی اور جن کے پاس زمین ہے ان کو زرعی ادویات،بیج،کھاد اور بجلی پر کوئی ٹیکس معاف نہیں کیا جاتاجس کی وجہ سے پاکستان دنیا میں چوتھا بڑا زرعی رقبہ رکھنے کے باوجود زرعی شعبے میں زوال پزیر ہے۔ لیکن حکومت کارپوریٹ فارمنگ کو فروغ دینے کے لیے بیرونی سرمایہ کاروں کو کئی سالوں تک لیز پر زمین کی ملکیت،ڈیوٹی فری مشینری کی درآمد، اپنی مرضی کی فصلیں کاشت کرنے اور بین الاقوامی قیمتوں پر بیچنے کی اجازت دے گی جس کے نتیجے میں چھوٹا زمیندار ان سرمایہ کاروں کامقابلہ کرنے سے قاصر ہو گا۔ ایک طرف حکومت پانی اور وسائل کی کمی کا رونا روتی ہے اور اپنے شہریوں کو پاکستان میں موجود بے کار پڑی قابل کاشت ایک کڑوڑ ایکڑ زمین کو استعمال میں لانے سے محروم رکھتی ہے لیکن غیر ملکی سرمایہ کاروں کے لیے ان ۰۱ لاکھ ایکڑ زمین کی حفاظت کے لیے ایک لاکھ افراد پر مشتمل حفاظتی فورس بھی بنائے گی اور ان کی زمینوں کے لیے پانی بھی مہیا کرے گی۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اگر حکومت ان زمینوں تک پانی پہنچانے کی صلاحیت رکھتی ہے تو یہ علاقے غریب کاشتکاروں کے لئے کیوں نہیں کھولے جاتے کہ وہ ان کو قابل کاشت بنا کر ان زمینوں کے مالک بھی بن جائیں۔ آپﷺنے فرمایا:

جس کسی نے بنجر زمین کاشت کی تو وہ اس کی ہو گئی﴿بخاری﴾۔

 یوں اسلام کے اس حکم پر چل کر نہ صرف غربت کا خاتمہ ہوگا بلکہ پاکستان کے پیداوار کے مسائل بھی حل ہونگے۔ اس کے ساتھ ساتھ ان زمینوں سے آنے والے خراج اور عشر کی مد میں خطیر رقم ملکی خزانے میں جمع ہوگی۔ حزب التحریر مطالبہ کرتی ہے کہ دس لاکھ ایکڑ زمین کو چند سرمایہ کاروں کے حوالے کرنے کا منصوبہ فوراً ترک کر دے۔ ان زمینوں کو بے زمین کاشت کاروں میں مفت تقسیم کیا جائے اور تمام زرعی شعبے کو کھاد، بیج، بجلی اور زرعی مشینری بغیر کسی ڈیوٹی فراہم کی جائے۔ ان اقدامات کے نتیجے میں پاکستان میں بے روزگاری کا خاتمہ اور زرعی شعبے میں خودکفالت حاصل ہوگی اور امریکہ و یورپ کی بلیک میلنگ سے بھی نجات حاصل کی جاسکے گی

 

 

Read more...

ہالبروک وزیرستان آپریشن کا حکم سنانے پاکستان پہنچ گیا ہے امریکی وائسرائے رچرڈ ہالبروک کو ملک بدر اور امریکی سفارت خانہ کو فی الفور بند کیا جائے، حزب التحریر کا اسلام آباد اور لاہور پریس کلب کے سامنے اور کراچی میں احتجاجی مظاہرے

ہندوستان سے دھتکارے جانے کے بعد پاکستان کا حقیقی چیف ایگزیکٹیو رچرڈ ہالبروک وزیرستان آپریشن شروع کرنے کے احکامات دینے ایک بار پھر پاکستان پہنچ گیا ہے۔ اقوام متحدہ نے اس ماہ جنوبی وزیرستان سے بڑی تعداد میں نقل مکانی کی پیشین گوئی بھی کر رکھی ہے اور اس سلسلے میں انتظامات بھی شروع کر دئیے ہیں۔ ہالبروک نے، جو 24سال کی عمر سے ویت نام اور کمبوڈیا میں فساد کرانے والی ٹیم کا حصہ تھا، اپنی 68سالہ زندگی کا بیشتر حصہ اسی خون کی سوداگری میں گزارا ہے۔ بوسنیا کے مسلمانوں کے خون سے بھی اس شخص کے ہاتھ رنگے ہوئے ہیں۔ اپنے پچھلے دورے کے دوران اس نے سوات پر بمباری کا حکم جاری کیا تھا جس کے نتیجے میں لاکھوں مسلمانوں بے گھر ، املاک تباہ اور بچے ،بوڑھے اور عورتیں قتل ہوئے۔ اس سوات کے ہلاکو خان کو ظہرانوں اور عشائیوں میں مدعو کرنے کیلئے پاکستان کے سیاسی رہنما اور فوجی کمانڈر ایک دوسرے پر سبقت لے جانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ صرف 7مہینے میں ہی اس شخص نے پاکستان میں قتل اور خون کابازار گرم کرنے کے ساتھ ساتھ اسلام آباد میں امریکی چھاؤنی کی تعمیر بھی شروع کروا دی۔ اس مغرور شخص کی اس چیرہ دستی اور اکڑ کی اصل وجہ پاکستان کے حکمران ہیں جو اس کے سامنے بچھے چلے جا رہے ہیں اور اس کے ہر حکم کی تعمیل فرمائش سے پہلے بجا لانا فرض سمجھتے ہیں۔ عوام مطالبہ کرتے ہیںکہ رچرڈ ہالبروک کو ملک بدر اور امریکی ایمبسی کو فی الفور بند کیاجائے۔ ہر گزرتا دن پاکستان میں ہلاکت خیز امریکی گرفت کو مضبوط کر رہا ہے۔ قوت اور استطاعت رکھنے والے حزب التحریرکو نصرت دینے میں جلدی کریںتاکہ استعماری قبضے کو پاکستان سے جڑوں سے اکھاڑا جا سکے اور اس کے ساتھ ان دیسی غدار ابن غدار حکمرانوں کو بھی کیفر کردار تک پہنچایا جا سکے جو پاکستان کے فرعون بنے بیٹھے ہیں۔

Read more...
Subscribe to this RSS feed

دیگر ویب سائٹس

مغرب

سائٹ سیکشنز

مسلم ممالک

مسلم ممالک